حفیظ تائب کی نظم نعت کا خلاصہ

حفیظ تائب کی نظم نعت کا خلاصہ  : نظم “نعت” بارھویں جماعت  سرمایہ اردو ( اردو لازمی ) کی پہلی نظم  ہے ۔ جس کے شاعر حفیظ تائبؔ ہیں اور یہ نظم ان  کی کتاب “صلواعلیہ وآلہ “ سے لی گئی ہے ۔  بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن پنجاب کے تمام بورڈزکے سالانہ امتحانات میں بار بار اسی  نظم  کا خلاصہ  آتا ہے ۔

شاعر: حفیظ تائب

نعت

خلاصہ

حضور ِ اکرم ﷺ تمام انسانوں میں افضل ترین ہستی ہیں ۔ کیونکہ آپ ﷺ وجہ وجودِ کائنات ہیں۔آپﷺ کا حسب و نسب اعلیٰ اور اخلاق ، اخلاقِ حسنہ کی بہترین مثال ہے ۔ دلوں کی زندگی اور اور ایمان والوں کا سہارا ہیں ۔ آپ ﷺ کی ذاتِ مبارک مہرومحبت کا گہوارہ اور صدق و صفا کا منبع ہے ۔ آپ ﷺ حق کے امین اور معجزات کا چشمہ ہیں ۔آپﷺ کی رحمت کا دامن اقدس دین ، دنیا اور آخرت کے آسمانوں کا سایہ ہے ۔ شاعر امتِ مرحومہ کی حالتِ زار کی داستان بارگاہ رسالت مآبﷺ میں بیان کرتے ہوئے جسارت ِ سوال کرتا ہے ۔  کہ اے حضور ! امت کی تاریک راہوں میں کامیابی و کامرانی کا ماہِ منیر کب ضوفشاں ہو گا ۔شبِ انحطاط کب ختم ہو گی اور آفتاب کمال کب طلوع ہو گا؟ حفیظ تائب تو بے  کس و لا چار  ہے ۔  اے آقا !  آپ ﷺ ہی نظر کرم فرمائیے۔ تاکہ کسی طرح آپ ﷺ کے آستان پر شرفِ باریابی ہو۔

6 thoughts on “حفیظ تائب کی نظم نعت کا خلاصہ”

  1. بہت اچھا کمپوز کیا ہے ۔ بس الفاظ تھوڑے مشکل ہیں۔ ایسے ہی کام جاری رکھیں بہت آسانی ہوتی ہے پڑھنے میں۔

    !!شکریہ

    Reply
  2. بہت اچھا کمپوز کیا ہے ۔ بس الفاظ تھوڑے مشکل ہیں۔ ایسے ہی کام جاری رکھیں بہت آسانی ہوتی ہے پڑھنے میں۔

    !!شکریہ

    Reply
  3. بہت اچھا کمپوز کیا ہے ۔ بس الفاظ تھوڑے مشکل ہیں۔ ایسے ہی کام جاری رکھیں بہت آسانی ہوتی ہے پڑھنے میں۔

    !!شکریہ

    Reply
  4. بہت اچھا کمپوز کیا ہے ۔ بس الفاظ تھوڑے مشکل ہیں۔ ایسے ہی کام جاری رکھیں بہت آسانی ہوتی ہے پڑھنے میں۔

    !!شکریہ

    Reply
  5. بہت اچھا کمپوز کیا ہے ۔ بس الفاظ تھوڑے مشکل ہیں۔ ایسے ہی کام جاری رکھیں بہت آسانی ہوتی ہے پڑھنے میں۔

    !!شکریہ

    Reply

Leave a Comment